Last Updated: Thu Oct 21, 2010 11:54 am (KSA) 08:54 am (GMT)

Morocco makes first film on Casablanca bombings

The poster of Moroccan movie “Broken Heart”
The poster of Moroccan movie “Broken Heart”

A Moroccan film was released examining for the first time the motives of young suicide bombers who carried out the 2003 Casablanca bombings, the worst terrorist attack in the history of the Kingdom.

“Broken Heart” was screened in the 8th Tangier Mediterranean Short Film Festival held from Oct. 4 to Oct. 9 and it tackled the reasons behind the deadly attacks through a classroom discussion.

عوامی پذیرائی

الجزائر ایک مرکزی بازار میں آڈیو ویڈیو کے ایک ریٹیل سینٹر کے مالک علی نے العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ "ان کے پاس یوسف الصدیق کو خرید کرنے والوں میں خواتین اور مرد یکساں دلچسپی لے رہے ہیں تاہم اس میں نوجوانوں کی جانب سے اس کی مانگ زیادہ ہے۔ ڈرامے کی خریداری میں عوامی دلچسپی میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ ہم یہ پوری ڈرامہ سیریل جو کئی سیریز میں دستیاب ہے صرف تین ڈالرمیں فروخت کر رہے ہیں"۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ آپ ایک ممنوعہ مواد فروخت کر رہے ہیں، اس پر آپ کو حکومت کی جانب سے کسی قسم کی کارروائی کا خدشہ نہیں۔ اس پر علی کا کہنا تھا کہ "ہمیں یہ خدشہ ہےکہ حکومت ہمارا سارا سامان قبضے میں لے لے گی تاہم ابھی تک حکومت کی جانب سے ان کے کاروبار میں کسی قسم کی رکاوٹ پیدا نہیں کی گئی"۔ انہوں نے مزید کہا کہ لوگوں کے گروہ کے گروہ ڈرامہ سیریل کو خرید رہے ہیں۔

وزارت مذہبی امورکی تنبیہ

ادھر دوسری جانب الجزائر کی وزارت مذہبی امورکی جانب سے ڈرامہ سیریل کی فروخت اور اس کی نمائش پر تنبیہ کی جا چکی ہے۔ العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے وزارت مذہبی امور کے ترجمان سید عدة فلاحی کا کہنا تھا کہ "یہ وزارت تجارت کا کام ہے کہ وہ بازارمیں خرید و فروخت کی جانے والی اشیاء پر نظر رکھے۔

وزارت مذہبی امور کی جانب سے مارکیٹ کے امور میں کسی قسم کی مداخلت نہیں کی جاتی۔ تاہم یوسف الصدیق نامی ڈرامہ سیریل میں متنازعہ مذہبی مواد شامل ہونے کی وجہ سے وزارت تجارت کو آگاہ کر دیا گیا ہے کہ اس کی فروخت یا نمائش پر پابندی لگائے۔

ایک دوسرے سوال پر عدة فلاحی کا کہنا تھا کہ وہ سرکاری ٹی وی پر اس ڈرامہ سیریل کی نمائش پر کلی طور پر پابندی نہیں لگاتے، ہم نے ڈرامہ سیریل انتظامیہ کو بتایا ہے کہ وہ اس میں سے متنازعہ مواد ختم کر دیں۔ جبکہ ٹیلی ویژن انتظامیہ سے بھی کہا گیا ہے کہ وہ ڈرامہ سیریل میں ممنوعہ مواد کے علاوہ دیگر حصوں کو نشر کر سکتے ہیں۔

تمام انبیاء کی تکریم واجب

العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے الجیرین وزارت مذہبی امور کے ترجمان عدہ فلاحی کا کہنا تھا کہ تمام علماء کااس پر اجماع ہے کہ انبیاء کرام، ان کی ازواج، اولاد اور ان کے صحابہ [ساتھی] کسی بھی قسم کے خاکہ بنانے سے بالاتر ہیں۔ ان کے جسمانی خاکے تیار کرنا یا ان کے نام منسوب کر کے کسی کی آواز کو ان کی آواز قرار دینا غلط ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ " یوسف الصدیق" کی طرز پر پروڈیوسر مصطفیٰ العقاد مرحوم کا تیارکردہ ڈرامہ "الرسالہ" بھی اسی طرح کی ایک متنازعہ ڈرامہ سیریل تھی۔ مختلف مسالک میں اختلاف کے باوجود تمام علماء نے اسے ناپسند کیا اور اس پر پابندی کا مطالبہ کیا تھا کیونکہ اس ڈرامہ سیریل میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے فرضی خاکے تیار کیے گئے تھے۔

فلاحی نے کہا کہ انیبا کے مراتب کے درمیان صرف اللہ تعالیٰ کر سکتے ہیں۔ مسلمانوں کے نزدیک تمام انبیا کی یکساں تکریم واجب ہے۔ کسی نبی کا درجہ دورسرے سے کم نہیں کیا جا سکتا اور نہ ہی کسی کی شبیہ تیار کی جا سکتی ہے۔

Comments »

Post Your Comment »

Social Media »